اسلام آباد: سربراہ جے یو آئی (ف) مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ ملک کی سیاسی صورتحال سے چین کے اعتماد کود ھچکا لگا ہے، ایک دوسرے پر گند ڈالنے کی سیاست کوعالمی ترجیحات کے تناظرمیں دیکھنا چاہیے.

تصادم میں ملک کی تباہی ہے، سیاست کوعالمی ترجیحات کے تناظرمیں دیکھنا ہوگا-فضل ارحمان

ان خیالات کا اظہار سربراہ جے یو آئی (ف) مولانا فضل الرحمان نے اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا.

ان کا کہنا تھا کہ اداروں کے تصادم میں ملک کی تباہی ہے، سوال یہ ہے کیا کہ ادارے ہمیشہ پارلیمنٹ کے خلاف استعمال ہوں گے. فیصلوں سے عداوت کی بونہیں آنی چاہیے.

ان کا کہنا تھا کہ پارلیمنٹ ہو، یا کوئی اور ادارہ، سب کواپنی آئینی حدود میں رہنا چاہیے، فیصلوں سےعداوت کی بونہیں آنی چاہیے. یہاں‌ کسی ادارے کے خلاف تجزیہ دیں، تو آپ کوغدارکہہ دیا جاتا ہے. کیا ہمیشہ سیاست دانوں کی تضحیک کی جائے گی.

انھوں نے کہا کہ اس وقت بیرونی محاذ پر ہمیں کئی چیلنجز درپیش ہیں. آج امریکا بھارت کے ساتھ ہے، ہمارے ساتھ نہیں، آج امریکا بھارت کے ذریعے چین کو کاؤنٹرکرنا چاہتا ہے. افغانستان بھارت کی لابی میں ہے. ان حالات میں‌ پاکستان کو سوچ سمجھ کر قدم اٹھانے ہوں‌ گے.

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ایرانی صدر بھارت کے سال میں دو دورے کر چکے ہیں، ایران بھارت کو برادر ملک کہہ رہا ہے. ہمیں‌ سفارتی محاذ پر مربوط اقدامات کرنے ہوں‌ گے.

سربراہ جے یو آئی کا کہنا تھا کہ ملک کی سیاسی صورتحال سے چین کے اعتماد کود ھچکا لگا ہے، امریکا نے بھارت سے گٹھ جوڑ کر لیا ہے۔ کیا ادارے ہمیشہ پارلیمنٹ کے خلاف استعمال ہوں گے، تصادم میں ملک کی تباہی ہے۔ سیاست کوعالمی ترجیحات کے تناظرمیں دیکھنا ہوگا۔