وزیر اعظم عمران خان ملائیشیا کے ہم منصب مہاتیر محمد کی دعوت پر 2 روزہ دورے پر کوالا لمپور پہنچ گئے۔

کوالالمپور انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے بونگا رایا کمپلیکس پہنچنے پر ملائیشیا کے وزیر دفاع محمد سابو اور دیگر اعلیٰ حکام نے وزیر اعظم کا استقبال کیا۔

اس موقع پر ملائیشیا میں پاکستانی ہائی کمشنر امنہ بلوچ اور ہائی کمیشن کے دیگر افسران بھی موجود تھے۔

عمران خان کے اس دورے میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر، مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد اور سیکریٹری خارجہ سہیل محمود بھی ان کے ہمراہ ہیں۔

ریڈیو پاکستان کی رپورٹ کے مطابق دونوں ممالک کے وزرائے اعظم باہمی ملاقات میں دوطرفہ دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کریں گے۔

علاوہ ازیں دونوں ممالک کے وزرائے اعظم کی موجودگی میں وفود کی سطح پر اہم معاہدے اور مفاہمتی یادداشت پر دستخط ہوں گے۔

عمران خان اور مہاتیر محمد مشترکہ پریس کانفرنس بھی کریں گے۔

وزیر اعظم عمران خان اپنے دورے میں ملائشیا کے انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اینڈ انٹرنیشنل اسٹڈیز (آئی ایس آئی ایس) کے زیر اہتمام تھنک ٹینک سے بھی خطاب کریں گے۔

وزیر اعظم کا یہ دورہ پاکستان اور ملائیشیا کے مابین مضبوط تعلقات اور دونوں ممالک کے درمیان اسٹریٹجک شراکت داری کو مزید تقویت دینے کے تناظر میں مشترکہ عزم کی علامت ہے۔

واضح رہے کہ اگست 2018 میں وزارت عظمیٰ سنبھالنے کے بعد وزیر اعظم عمران خان کا ملائیشیا کا یہ دوسرا دورہ ہوگا۔

اس سے قبل وزیر اعظم 20 اور21 نومبر 2018 کو ملائیشیا کا دورہ کرچکے ہیں۔

خیال رہے کہ وزیراعظم مہاتیر محمد نے21 مارچ سے 23 مارچ 2019 تک پاکستان کا دورہ کیا تھا اور یوم پاکستان پریڈ میں مہمان خصوصی تھے۔

دونوں وزرائے اعظم نے ستمبر 2019 میں نیویارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران بھی ملاقات کی تھی۔

وزیراعظم ہاؤس سے جاری اعلامیے میں کہا گیا پاکستان اور ملائیشیا عقیدے اور ثقافت کے اعتبار سے قریبی اور دوستانہ تعلقات رکھتے ہیں اور اس میں باہمی اعتماد اور مفاہمت کے خواہش مند ہیں۔

وزیراعظم عمران خان مختلف ملاقاتوں کے دوران علاقائی اور بین الاقوامی امن وسلامتی کے حوالے سے پاکستان کے مثبت کردار پر بھی بات کریں گے۔

علاوہ ازیں عمران خان مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور بھارت کے جارحانہ رویے کی وجہ سے علاقائی امن وسلامتی کو درپیش خطرات سے متعلق بھی گفتگو کریں گے۔