91.7 F
Islamabad
Monday, May 20, 2019
Home Instant Post International نیوزی لینڈ کا دہشت گرد برنٹن ٹرنٹ کیسے اتنا مسلح ہو کر...

نیوزی لینڈ کا دہشت گرد برنٹن ٹرنٹ کیسے اتنا مسلح ہو کر مسجد تک پہنچا؟ دل دہلا دینے والی ویڈیو رپورٹ

5968

نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں اندھا دھند فائرنگ سے متعدد نمازی شہید

نیوزی لینڈ پولیس کے مطابق کرائسٹ چرچ شہر کی دو مساجد میں اندھا دھند فائرنگ کے نتیجے میں دو درجن سے زائد نمازیوں کی شہادت کی اطلاعات ہیں۔ پولیس حکام نے تصدیق کی ہے کہ مسجد میں فائرنگ کا مرتکب حملہ آور گرفتار کر لیا گیا ہے۔

دیکھیئے ویڈیو کس طرح بے دردی سے اندھا دھند فائرنگ کرکے نمازیوں کو شہید کیا گیا

 

نمازیوں کے قتل عام کرنے والا قاتل کی شناخت برنٹن ٹرنٹ کے نام سے ہوئی۔ اس نے قتل عام کی دلخراش واردت پندرہ منٹ تک فیس بک پر نشر کی۔ کرائسٹ چرچ کے کمشنر مائیک بش نے بتایا کہ ’’ہماری معلومات کے مطابق فائرنگ کے نیتیجے میں ہلاکتیں ڈین ایوینیو اور لِن ووڈ ایوینیو پر واقع مساجد میں ہوئیں۔

پولیس حکام کے مطابق اب تک چار افراد، جن میں ایک عورت بھی شامل ہے، کو اب تک حراست میں لیا جا چکا ہے۔

وزیرِ اعظم جاسنڈا آرڈرن نے اسے ’نیوزی لینڈ کی تاریخ کا سیاہ ترین دن‘ قرار دیا ہے۔

عینی شاہدین نے واقعہ کی کوریج کرنے والے ذرائع ابلاغ کو بتایا ہے کہ ’’حملہ آور نے فوجی وردی سے ملتا جلتا لباس پہن رکھا تھا۔ اس کے ہاتھ میں خودکار بندوق تھی جس سے وہ مسجد النور میں اندھا دھند نمازیوں پر فائرنگ کرتا رہا۔‘‘

مائیک بش نے مزید بتایا کہ فوج نے کچھ مشتبہ گاڑیوں میں موجود دھماکا خیز مواد کو ناکارہ بنا دیا ہے۔ پولیس نے ہدایت کی ہے کہ آج پورے نیوزی لینڈ میں مسلمان مساجد میں نماز ادائی سے اجتناب کریں۔ حفظ ماتقدم کے طور پر مسجدوں کو تالے لگا دئے گئے ہیں۔

پولیس بیان میں کہا گیا ہے کہ کرائسٹ چرچ کے جس علاقے میں دہشت گردی کی یہ کارروائی کی گئی ہے وہاں کے رہائشی گھروں میں رہیں اور غیر ضروری طور پر باہر نکلنے سے گریز کریں۔ نیز کسی بھی مشتبہ کارروائی کی صورت میں فوری طور پر اس کی پولیس کو دی جائے۔

برطانوی اخبار ’’ڈیلی میل‘‘ نے دعوی کیا ہے کہ جمعہ کے روز ہونے والی دلخراش واردات میں زخمیوں کے علاوہ کم سے کم 27 افراد کی شہادت ہوئی ہے۔ اسی اخبار نے عینی شاہدین کے حوالے سے بتایا کہ انھوں نے حملے کے وقت تقریباً پچاس سے زاید گولیاں چلنے کی آوازیں سنیں۔

سیکیورٹی اداروں نے شہر کے بڑے حصے کی ناکہ بندی کر دی ہے۔ پولیس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’وہ صورتحال پر قابو پانے کے لئے اپنی پوری توانائیاں صرف کر رہی ہے، تاہم صورت حال اس وقت بھی شدید خطرناک ہے۔‘‘

حملے کی زد میں کون کون آیا؟

نیوزی لینڈ کے دورہ پر آئی بنگلہ دیش کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی تمیم اقبال نے ایک ٹویٹ میں بتایا کہ پوری ٹیم جان بچا کر نکلنے میں کامیاب ہو گئی۔

ٹیم کی کورریج کرنے والے ایک رپورٹر نے ٹویٹ کی کہ ٹیم کے ارکان ’ہیگلی پارک کے قریب واقع اس مسجد سے بچ کر نکلے ہیں جہاں پر حملہ آور موجود ہیں۔‘

بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ کے ترجمان جلال یونس کا کہنا ہے کہ ٹیم کے زیادہ تر کھلاڑی بس کے ذریعے سے مسجد گئے تھے اور اس وقت مسجد کے اندر جانے والے تھے جب یہ واقعہ پیش آیا۔ انھوں نے اے ایف پی نیوز ایجنسی کو بتایا ’وہ محفوظ ہیں۔ لیکن وہ صدمے میں ہیں۔ ہم نے ٹیم سے کہا ہے کہ وہ ہوٹل میں ہی رہیں۔‘