وزیرِ اعظم عمران خان نے وفاقی وزیر آبی وسائل فیصل واوڈا پر ٹاک شوز میں شرکت کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔

وزیرِ اعظم کی مشیر برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ وفاقی وزیر پر یہ پابندی 2 ہفتوں کے لیے رہے گی۔

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ وزیراعظم نے فیصل واوڈا سے ٹاک شو میں ان کے رویے پر وضاحت بھی طلب کرلی ہے۔

خیال رہے کہ چند روز قبل نجی ٹی وی چینل کے ٹاک شو میں فیصل واوڈا بطور مہمان شریک ہوئے جہاں وہ اپنے ساتھ ’بوٹ‘ لے آئے۔

فیصل واوڈا سے استعفیٰ کا مطالبہ

اس ٹاک شو میں ان کے ہمراہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے سینئر رہنما قمر زمان کائرہ اور مسلم لیگ (ن) کے جاوید عباسی بھی شریک تھے۔

اس موقع پر انہوں نے کہا تھا کہ ن لیگ نے لیٹ کر بوٹ کو عزت دی ہے، بوٹ کو چوم کر عزت دی ہے۔

اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے فیصل واوڈا کے اس عمل کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

بعد ازاں جیو نیوز کے پروگرام ’کیپیٹل ٹاک‘ کے میزبان حامد میر سے گفتگو کرتے ہوئے فیصل واوڈا نے اعتراف کیا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان کو بھی ان کا یہ رویہ پسند نہیں آیا۔

بوٹ معاملہ کاشف عباسی پر دو مہینے کے لیے پابندی عائد

ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کو یقین دلایا ہے کہ آئندہ ایسا نہیں ہوگا اور ذمے داری کا مظاہرہ کروں گا۔

بوٹ معاملہ اینکر اپنی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام