طیارے کا عملہ اپنے ہاتھ ہمیشہ پیچھے کیوں رکھتا ہے؟

فضائی سفر کرتے ہوئے اگرآپ غور کریں تو دیکھیں گے کہ طیارے کا عملہ ہمیشہ مسافروں کو خوش آمدی دکہتے ہوئے اپنے ہاتھوں کو کمر کے پیچھے رکھتا ہے۔

اس کے بعدعملہ جب واپس طیارے کے کیبن کی طرف جاتاہے تو بھی وہ یہ نہیں دیکھتے کہ سیٹ بیلٹ ٹھیک سے باندھی گئی ہے، مسافروں نے موبائل فونز بند کردئیے ہیں یا نہیں۔ لیکن وہ ایسا کیوں کرتے ہیں؟

رپورٹ کے مطابق ایسا وہ ایک بہت خاص وجہ سے کرتے ہیں، جو اکثر افراد کو معلوم نہیں۔ وہ وجہ بھی کافی سادہ ہے۔ طیارے کے ٹیک آف سے قبل عملے کو پرواز میں سفر کرنے والے مسافروں کی گنتی کرنا ہوتی ہے۔

اس کا ایک طریقہ تو یہ ہے پرواز میں مسافروں کی آمد کے وقت ان کی گنتی ہو یا دوسرا یہ کہ جب مسافر نشستوں پر بیٹھ جائیں۔

اس مقصد کے لیے طیارے کے عملے کے پاس ایک خصوصی کاؤنٹر ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے ہاتھ کمر پر ہوتے ہیں کیونکہ وہ کاؤنٹر کے ذریعے مسافروں کی گنتی کررہے ہوتے ہیں۔

ایسا کرتے ہوئے ان کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ لوگوں کی توجہ کا مرکز نہ بنیں۔ اس لئے اپنے ہاتھ کمر کے پیچھے رکھتے ہیں۔