فیس بک کے محفوظ استعمال کے لیے پرائیویسی اور سیکیورٹی کے تمام آپشن کا استعمال کریں

واشنگٹن: فیس بک صارفین کےلیے ایک اور بری خبر ہے کہ فیس بک اینڈروئیڈ فونز استعمال کرنے والے صارفین کی فون کالز اور ٹیکسٹ پیغامات کا ڈیٹا بھی جمع کرلیتی ہے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق کیمبرج اینالیٹکا اسکینڈل میں پھنسی فیس بک کےلیے ایک نئی پریشانی کھڑی ہوگئی۔ فیس بک کو اب اینڈروئیڈ فونز پر فیس بک استعمال کرنے والے صارفین کی فون کالز اور میسیجز کا ڈیٹا جمع کرنے کے الزام کا بھی سامنا ہے۔

ان الزامات کا انکشاف اس وقت ہوا ہے جب فیس بک نے صارفین کا ڈیٹا بلا اجازت استعمال کرنے کا اعتراف کیا۔ فیس بک کے بانی مارک زکربرگ کی جانب سے گزشتہ روز امریکا اور برطانیہ کے اخبارات میں ایک صفحے کا معافی نامہ چھپوایا گیا۔ اس کے بعد کچھ صارفین نے سوشل میڈیا پر اپنا ڈیٹا اپ لوڈ کیا جس میں دیکھا گیا کہ اینڈروئیڈز فون استعمال کرنے والے صارفین کے فون کالز کا ریکارڈز بشمول تاریخیں، وقت، کال کا دورانیہ، کال کرنے والے فرد کا نام اور فون نمبرز وغیرہ تک کا ڈیٹا فیس بک جمع کرلیتی ہے۔

فیس بک انتظامیہ نے اس الزام کی تردید کرتے ہوئے بتایا کہ ایسا صرف اُن صارفین کے ساتھ ہوسکتا ہے جنہوں نے اینڈروئیڈ جیلی بین (ورژن 4.1) استعمال کیا ہو جس کےلیے فیس بک پہلے آپریٹنگ سسٹم میں فون کونٹیکٹس تک رسائی کے ساتھ کال اور ٹیکسٹ لاگز تک بھی رسائی کی اجازت مانگتی تھی۔ اجازت ملنے کے بعد رسائی حاصل کرلی جاتی تھی تاہم چند سال بعد اس آپشن کو ختم کردیا گیا تھا لیکن تب تک جن افراد کا ڈیٹا جمع کیا چکا تھا اسے ختم نہیں کیا جاسکا۔

واضح رہے کہ کوئی بھی صارف اپنے فیس بک اکاؤنٹ کی سیٹنگز میں جاکر ’جنرل‘ میں موجود آخری آپشن ’ڈاﺅن لوڈ اے کاپی آف یور فیس بک ڈیٹا‘ پر کلک کرکے فیس بک کی جانب سے صارف کی جمع کی گئی معلومات کو دیکھ سکتا ہے۔

Source link

Some Android cellphone users noticed recently that Facebook has saved a virtual trove of their personal call data that extends back years.

Amid an outcry over the social network’s handling of a controversy involving a third-party application’s misuse of personal data, several Android users who pulled down archive data from Facebook found very detailed personal metadata. That information included call logs containing names, phone numbers, and the length of each call made.

Tech news site Ars Technica first reported the data practice and user reports.

In a statement given to Ars Technica, Facebook pointed out that the call log was “a widely used practice to begin by uploading your phone contacts.”

The company clarified Sunday that it only collects that data on users who opt-in to the feature when installing Messenger or Facebook Lite.

“People have to expressly agree to use this feature. If, at any time, they no longer wish to use this feature they can turn it off in settings, or here for Facebook Lite users, and all previously shared call and text history shared via that app is deleted,” the company said.

In the wake of the Cambridge Analytica data scandal, more Facebook users have become increasingly educated about the data they’re sharing with the platform, and how that information is being used.

Facebook has come under mounting pressure from privacy advocates, advertisers and people who use the platform. On Sunday, the network was forced to take out ads in major publications to apologize for the data scandal.

Some users have even begun opting out of using the site altogether, although Facebook founder and CEO Mark Zuckerberg said last week that people weren’t ditching the site in large numbers.