وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ جس کو شراب پینی ہوتی ہے وہ کہیں سے بھی لے کر پی لیتا ہے۔تفصیلات کے مطابق ڈپٹی اسپیکر قاسم خان سوری کی زیر صدارت ہوا جس میں حکومتی اقلیتی رکن رمیش کمار نے شراب کے لائسنس کی منسوخی کا بل پیش کیا اور اس پر رائے شماری کرانے کا مطالبہ کیا۔حکومتی رکن کے بل کی حمایت متحدہ مجلس عمل کے ارکان نے بھی کی جب کہ رمیش کمار نے کہا کہ شراب تمام مذاہب میں حرام ہے لہٰذا اس کی فروخت بند کی جائے۔

پارلیمانی سیکرٹری قانون ملیکہ بخاری نے کہا کہ ایسا بل پہلے بھی پیش ہو چکا ہے مگر نتیجہ نہیں نکلا لہٰذا بل متعلقہ کمیٹی کو بھیج دیا جائے۔حکومتی رکن نے بل پر ووٹنگ کرانے کا مطالبہ کیا لیکن بل پر ڈپٹی اسپیکر نے رائے لی اور کثرت رائے سے بل پیش کرنے سے روک دیا گیا۔اس حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ سستی شہرت کیلئے شراب کی قرارداد لانے کی کوشش کی گئی۔انہوں نے کہا کہ جس کو شراب پینی ہوتی ہے وہ کہیں سے بھی پی لیتا ہے۔