امریکی سفارتکار کا نام بلیک لسٹ میں شامل، ملک چھوڑنے قبل اجازت لینا ہو گی‘

 

ٹریفک حادثہ
حادثے کی سی سی ٹی وی فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ سفید گاڑی نے اشارہ توڑ کر طالب علم کو ٹکر ماری

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ایک موٹر سائیکل سوار کو کچلنے کے واقعے میں ملوث امریکی سفارتکار کرنل جوزف امینوئل کو بلیک لسٹ کر دیا ہے جس کے بعد وہ متعلقہ حکام یا عدالت کی اجازت کے بعد ہی ملک چھوڑ سکتے ہیں۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل راجہ خالد نے بی بی سی کو بتایا کہ ملزم کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں ڈالنے کا طریقہ کار کافی طویل ہے اس لیے انھیں بلیک لسٹ کیا گیا ہے۔

بی بی سی کے نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق جسٹس عامر فاروق کی سربراہی میں اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج نے منگل کو اسلام آباد پولیس اور حادثے میں ہلاک ہونے والے نوجوان عتیق بیگ کے والد کی جانب سے کرنل جوزف امینوئل کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی درخواست کی سماعت کی۔

 

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ سفارت کاروں کو ویانا کنونشن کے تحت استثنیٰ حاصل ہے اس لیے انھیں گرفتار نہیں کیا جا سکتا البتہ اگر کوئی سفارت کار سے یہ استثنیٰ خود واپس کر دے یا اس سے یہ واپس لے لیا جائے تو پھر اُس کے خلاف ملکی قانون کے تحت کارروائی عمل میں لائی جا سکتی ہے۔

 

انھوں نے عدالت کو بتایا کہ امریکی سفارت کار کو حاصل استثنیٰ کے بارے میں پاکستانی حکومت امریکی حکام سے رابطے میں ہے۔

پاکستان امریکہتصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES
Image captionڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ سفارت کاروں کو ویانا کنونشین کے تحت استثنیٰ حاصل ہے

جسٹس عامر فاروق نے ڈپٹی اٹارنی جنرل اور وزارت خارجہ کے ڈی جی پروٹوکول کو حکم دیا کہ عدالت اس بارے میں ایک سوال نامہ تیار کرے گی جس کی روشنی میں حکومت جواب تیار کر کے عدالت میں جمع کروایا جائے گا۔

یہ ٹریفک حادثہ سات اپریل کو پیش آیا تھا جب دارالحکومت میں دامنِ کوہ چوک پر امریکی سفارت خانے کے فوجی اتاشی کرنل جوزف نے اشارہ توڑ کر ایک پاکستانی طالب علم کی موٹرسائیکل کو ٹکر ماری تھی جس کے نتیجے میں وہ طالب علم ہلاک اور اس کا ساتھی شدید زخمی ہو گیا تھا۔

 

یاد رہے کہ اس سے پہلے اسلام آباد ہائی کورٹ نے وزارت داخلہ کو حکم دیا تھا کہ وہ دو موٹر سائیکل سواروں کو کچلنے کے واقعے میں ملوث امریکی سفارت کار کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کرنے کے بارے میں ایک ہفتے میں فیصلہ کریں۔

عدالت نے مقدمے کی سماعت دس روز کے لیے ملتوی کر دی ہے۔

 

 

BBC Urdu